آؤ میرےبہادر بچے اسکول چلیں

I Don’t know how mothers will send their kids back to APS tomorrow

آؤ میرےبہادر بچے اسکول چلیں

یہ چھٹیاں کیسی چھٹیاں تھیں
خواب میں تم روزروتے تھے
باہر جانے سے تم ڈرتے تھے
لال رنگ سےتم گھبراتے تھے
اسکول کے نام پر تمہارا رنگ پیلا پڑتا تھا
میں جانتی ہوں یہ مشکل ہے
سچ یہ ہے کے میں نہیں جانتی یہ کیسا ہے
کیوں کے میں نے کبھی اپنے دوستوں کو
خوں میں نہاے نہیں دیکھا ہے
میں نے کبھی ان کے جسموں کو
سو حصوں میں بکھرا نہیں دیکھا ہے
میں نے کبھی اپنی استانی کوشعلوں میں لپیٹا نہیں دیکھا ہے
میں نہیں جانتی یہ کیسا ہے
لیکن پھر بھی آؤ میرےبہادر بچے اسکول چلیں
کے اب ان درندوں سے گھبرا کر
کب تک ہم چھپ کر بیٹھیں گے
یہ بزدل سیاست دانوں سے
یہ فرقے میں الجھی قوم سے
کب تک امید لگا کر بیٹھےگے
تو اب ان اندھیروں کی مٹانے کا
بس ایک یہی طریقہ بچا ہے
آؤ میرےبہادر بچے اسکول چلیں

باریک کنگھی اور اماں … سمجھ تو آپ گئے ہوں گے

باریک کنگھی اور اماں … سمجھ تو آپ گئے ہوں گے

زنیرہ ثاقب

 منی کے سر میں جویں پڑ گیی.. بیچاری سارا دن اپنا سر کھوجاتی رہتی .. اماں کو کوئی خاص پروا نہ تھی.. لکن اچانک ایک دن اماں نے فیصلہ کیا کے اب ان گھس بٹھیوں کے خاتمے کا وقت آ گیا ہے . اس لئے کے اب یہ جویں اماں کے سر میں بھی آنا شروع ہو گی تھیں . منی کی اماں نے فورن ایکشن لینے کا فیصلہ کیا. انھوں کے ایک بہترین “باریک کنگھی” منگوائی . یہ باریک کنگھی دنیا کی ٦ بہترین باریک کنگھیوں میں سے تھی . بڑی تیزی سے منی کے سر پر ریپڈ ایکشن شروع کر دیا گیا. باریک کنگھی واقعی بہترین تھی . اس کی مدد سے جووں کا جلد صفایا ہو گیا. کچھ ہی دنوں میں منی کا سر بلکل صاف ہو گیا

 . منی کی اماں نے ابھی چین کی بانسری بجانے کے لئے اٹھائی ہی تھی کے منی نے پھر سے سر میں خارش شروع کر دی. اماں نے ایک بار پھر باریک کنگھی ایکشن کیا. جویں ایک دففہ پھر صاف ہو گیں . لکن ابھی چین کی بانسری……… کے دوبارہ..

 منی کی امی کی سمجھ میں نہیں آ رہا تھا کے آخر مسلہ کیا ہے. ادھر جویں نعرے مار رہی تھی کے تم کتنی جویں مارو گے ھر بال سے جویں نکلیں گی . پھر ایک “عورت دانا” نے منی کی اماں کو بتایا کو بی بی جب تک تم اپنی بیٹی کو اپنا سر صاف رکھنے کی تربیت نہیں دو گی …. اس کے بہتر اور صاف دوست نہیں بنواؤ گی.. اس کو اچھے اور برے، صاف اور گندے کی تمیز نہیں سکھاؤ گی تب تک جویں واپس اتی جائیں گی …. باریک کنگھی ہر مسلے کا حل نہیں…. جویں تو مارو لکن ساتھ سوچ بھی تبدیل کرو.

 منی کی اماں کو سمجھ میں آیا یا نہیں… امید ہے آپ تو سمجھ گیے ہوں گے

Terrorism – The Long Term Solution – پاکستان میں دہشت گردی کا حل

New Laws need to be made and new actions need to be taken in light of what is happening in the country right now (or has been happening since 2001). Following are my suggestions to fix the things in the long run (Your Contributions/Suggestions are appreciated)

· FATA shall be declared Pakistan’s part officially. The Jirga and political agent system shall be run by the Government. The justice system in FATA shall be made official keeping in mind the old traditions and fair justice requirements. The grand Jirga or justice court shall not give a decision which is against Pakistan’s law. In case of such decision the Jirga member/members shall be prosecuted under the Pakistan’s law.

o   Government to declare FATA tax free zone for the next 10 years and invest in building factories and other manufacturing facilities over there.

o   After the major terrorist leaders been eliminated government shall announce amnesty to minor offenders on the condition that they give up           weapons and terrorist activities and offer them employment at the government owned factories/facilities in FATA.

o  Anyone involved in terrorism activities after this shall be captured and prosecuted under the Pakistan’s Law.

o   Government shall allocate special budget with a five years plan to make schools, colleges and universities in all the FATA agencies. These intuitions shall provide free books, uniform and facilities to students.

·         Government shall make Islamic councils which shall have half and half representation of PhD and Masters Islamic researchers and Madaris Ullamas. These councils shall consider any matter which may need the Islamic translation or Fatwa (if it is not covered by Pakistan’s law already). The council shall consider giving fatwas about anything in light of the Pakistan’s law and international standards of justice. The fatwa of the government council shall be considered the government document and lawmakers may take guidance from it. The fatwas by the councils shall be challengeable in Supreme Court of Pakistan which may change or restrict it in the light of the Pakistan’s law.

o   These councils shall exist at district, regional, and national level. In case Islamic translation (Fatwa) of a matter is needed, an individual(s) may       make the application through a properly defined procedure.

·         No Madrasas, Molvi, and Aalim shall be allowed to give a fatwa on his own about anything. If anyone is found to be involved in such activity which has (or may lead to) led to any sort of destruction, violence, and in worst cases murders/massacre, the person giving the fatwa shall be prosecuted under the terrorism act and shall be given punishment accordingly.

·         All the imams of the mosques shall be appointed by the government. They shall not be involved in any hatred speech, giving fatwas, and promoting a specific sect. One sector/neighbourhood shall only have one mosque run by the government.

·         The Friday Sermon at the Mosques shall not include hatred speech, promotion of specific sect, and terrorism. The Sermon may only be given by the government appointed Imam. If the imam needs to invite anyone else for Sermon he shall take the permission from the Islamic Council.

·         The terrorism act shall clearly state that anyone charged under the terrorism act will be persecuted in the anti-terrorism courts. The courts shall be bound to give the decision on it within 2 months. In case a capital punishment is awarded this shall be carried out within the week of the award. If an appeal is made to the Supreme Court, the Supreme Court shall be bound to give a decision on it within 1 month. If appeal gets rejected the terrorist shall be given capital punishment within the week.

o   Government shall be responsible for providing extra security to judges, lawyers, witnesses and claimants of terrorism cases.

o   If needed, the identity of Judges, Lawyers, Witnesses shall be kept confidential. Moreover due to security threats the prosecution may be carried out through in camera sessions.

·         An Effective Anti-Terrorist Unit shall be made in the police. The ATU shall exist at city level of every police department. The ATU may be trained by the Army initially. In case of an incident the ATU shall be able to reach the place within 20 minutes and start action. The army shall only be called upon in special circumstances.

·         An accreditation council shall be made for all Islamic schools / madrasas. The accreditation council shall develop the curriculum to be taught in these Islamic schools. The accreditation to madrasas shall be given on the following basis,

o   All students in the madrasas shall be registered with the council with complete bio data.

o   The madrasas shall follow the curriculum developed by the accretion council along with compulsory subjects of English, Maths, and Urdu.

o   The schools shall only take students from grade five onwards. The schools shall be allowed to offer education till matriculation only.

o   Further education (after matriculation) shall only be carried out in Colleges, Universities and Degree Awarding Institutions.

o   After the necessary education the students shall go through the exam setup by the government and they shall be awarded the matriculation     degree by the government.

o   The accreditation shall also be subject to complete and transparent audit of the donations and aid received and it’s spending.

o   All the madrasas shall register with accreditation council by the end of 2016.

o   Al unregistered madrasas after 2016 shall be closed down.

o   Any registered madrasa involved in hatred speech, prompting a specific sect, or involved in terrorism shall be fined, and maybe closed down. The owner/manager/teacher involved in such act shall be prosecuted under the terrorism act.

ایک قدم آگے اور دو پیچھے رکھنے والی قوم

    ا ایک قدم آگے                   

دنیا کے سب سے اونچے میدانوں پر پولو کھیلنے والی قوم

پہاڑوں کا سینہ چیر پر کراکُرم ہائی وے بنانے والی قوم

ارفع، ملالہ اور اعتزاز جیسے بچوں کو جنم دینے والی قوم

کینسر ہسپتال بنانے کے لئے اپنا زیور دینے والی قوم

عبدل ستار ایدھی والی قوم

دنیا کی چوتھی بڑی انٹرنیٹ استعمال کرنے والی قوم

دنیا کی سب سے بڑی دیپ سی پورٹ رکھنے والی قوم

دنیا کے ٥٠% فٹ بال بنانے والی قوم

ڈاکٹر عبدل سلام والی قوم

نصرت فتح علی خان  والی قوم

اپنے بوڑھے ماں باپ کے ساتھ والی قوم

دنیا کی دوسرے بڑی سالٹ مائن کھودنے والی قوم

اتنی جانیں کھو کر بھی ہمّت دکھانے والی قوم
 دوقدم پیچھے

٢ روپیہ کا پٹرول بچانے کے لئے غلط موڑ کاٹنے والی قوم

آفس میں دوستوں کو چائے پلاتی ملک کے سسٹم کو کوسنے والی قوم

کبھی ایران کبھی سعودیہ کے پیچھے اپنی مسلمان شناخت  ڈھونڈنے والی قوم

شہید کی تعریف پر سخت مغالطے میں رہنے والی قوم

ٹرک کی بتی کے پیچھے لگنے والی قوم

ایک دن میں آسمان پر چڑھانے اور اگلے دن زمین میں دبانے والی قوم

اپنے بچوں کو پوچھنا نہیں لکن شام کے دکھ میں گھلنے والی قوم

١ مئی کو چھٹی کر کے ماسی سے کام کروانے والی قوم

عید پر بکرا الله کے نام پر کاٹنے اور پھر سارا خود ہی پھڑکانے والی قوم

مغرب کی تقلید میں کپڑے پہننے اور بال بنانے لکن ایمان داری نہ اپنانے والی قوم

بچوں کو حب ال وطنی کے لیکچر دیتے ہوے گاڑی سے کوڑا باہر پھینکنے والی قوم

صبح شام انڈیا سے نفرت اور رات کو فیملی آوٹنگ میں انڈین فلم دیکھنے  والی قوم

ہر چیز میں یہودی سازش اور ڈرامہ ڈھونڈنے والی قوم

باہر چائلڈ لیبر پر اجلاس اور گھر میں ١٢ سال کی بچی سے کام کروانے  والی قوم

بے ایمانی، جھوٹ، دھوکا دہی میں سب سے آگے اور اسلام کی چمپین بننے والی قوم

ایک قدم آگے اور دو پیچھے رکھنے والی قوم 

Copyright @ ZunairaSaqib 2014 

!شکر ہے اعتزازتم مر گۓ

!شکر ہے اعتزازتم مر گۓ

زنیرہ ثاقب

پیارے اعتزاز

تمہاری شہادت کی خبر سنی تو دل کو یگ گونہ اطمینان حاصل ہوا یوں لگا کے میرا ایمان تازہ ہو گیا . گر چے کے تمہاری جان چلی گئے.. تمہاری ماں کا جوان بیٹا چلا گیا …دوستوں کا ساتھی بچھڑ گیا لکن یقین مانو کے یہ تمہارے حق میں اچھا ہوا کے تم اب اس دنیا میں نہیں رہے.

خدا نہ خواستہ اعتزاز تم بچ جاتے تو مصیبت ہو جاتی. ویسے تو بہت سے لوگوں کی روزی پر تم نے لات مار دی ہے. اب ان کو سمجھ میں نہیں ہے گا کس طریقے سے وہ تمہارا تعلق یہودی قوتوں سے ثابت کریں. کیسے تمہیں غیر ملکی ایجنٹ کہیں اور کیسے کہیں کے یہ سب پاکستان کے خلاف سازش ہے. شکر ہے کے اعتزاز تم مر گئے…

اگر اعتزاز تم بچ جاتے اور طالبان کے خلاف کچھ کہ دیتے تو ایک طوفان کھڑا ہو جاتا. . کیا تمہیں پتا نہیں ہے کے طالبان نام کی کوئی چیز پاکستان میں ہے ہی نہیں.. آج تک تم نے طالبان کو دیکھا ہے؟؟ فون پر ذمداری تو کوئی بھی لے سکتا ہے. ویسے تو یہ اور بات ہے کے ہم نے کبھی الله کو نہیں دیکھا.. رسول کے آواز نہیں سنی لکن اس پر تقین ہے کیوں کے وہ تو ایمان کا حصّہ ہے. ہاں جب تک طالبان دست با دست حاضر ہو کر یہ نہ کہیں کے جناب والا ہم ہی وہ خونی درندے ہیں جو کے سکولز کو فخر سے تباہ کرتے ہیں…. معصوم لوگوں کے چھیتڑے اڑاتے ہیں.. ہم تو نہ مانیں گے کے کو طالبان ہیں…. ویسے بھی آنکھوں دیکھا اور کانوں سنا ہی سچ ہوتا ہے…

اگر تم بچ جاتے تو ایک گروہ وہ بھی ہے جو کے سانسی طریقوں سے ثابت کرتا کے خود کش حملے میں بچ جانا تو ممکن ہی نہی اس کے جواز میں وہ خود کش جیکٹ کے بنانے کے طریقے سے لے کر اس میں مو جود لوازمات سے ثابت کرتا کے یہ بچہ جو بچ گیا ہے یہ حقیقت میں اسلام پاکستان اور طالبان کو بدنام کرنے کی سازش ہے اور کچھ نہیں. … تو اعتزاز شکر کرو کے تم مر گئے … ورنہ تمہارے خاندان والے ساری عمر لوگوں کے آگے صفایاں پیش کرتے اور تم اپنی باقی عمر طالبان کے حملے اور قوم کی لعن تان سے بچنے کے لئے کسی اور ملک میں گزار رہے ہوتے. اور گر چے کے یہ لکھتے ہوے میرے ہاتھ کامپتے ہیں اور دل روتا ہے لکن یہ سچ ہے کے میں خوش اور شکر گزر ہوں کے تم مر گئے اور قوم کو ایک ہیرو مل گیا. الله تمہیں جنّت میں جگہ دے امین

میرا نام؟

Nov 17, 2013

زنیرہ ثاقب

میرا نام ربیع مسیح ہے میری عمر آٹھ سال ہے…میں دوسری کلاس میں پڑھتی ہوں… تھی… میرا ہاتھ میں ایک سوراخ ہے شاید اس سے کچھ گزر گیا ہے.. کوئی بال بیرنگ یا کوئی چھرا … لکن ابھی اس میں جان ہے اس لئے درد کا احساس ہے … میں نے دیکھا ہے کے وہ آہستہ آھستہ ڈھلکتا ہے…. اب تو وہ ہاتھ نہیں.. وہ تو بس ایک گوشت کا لو ٹھرا ہے.. میرے آنکھیں یہ سب دیکھتی ہیں… میں دیکھتی ہوں.. کے سب گوشت کے لوتھرے ہیں.. اماں نے بتایا تھا کے ہم سب کا خون سرخ ہے اندر سے ہم سب ایک ہیں . ماں سچ کہتی تھی .. لکن یہ نہیں بتایا تھا کے جب خون اور گوشت مل جاتا ہے تو باہر سے بھی سب اک جیسےلگنے لگتے ہیں…..

میرا نام کرن جان ہے … میرا جسم آھستہ آھستہ ٹھنڈا ہوتا ہے.. میرے کوکھ میں جو جان ہے وہ باہر انے کو تڑپتی ہے.. شاید اس کو سمجھ نہیں آتی کے یک دم اس کی پناہ گاہ چھلنی کیسے ہو گئی ؟ اتنی گرمی کیوں بڑھ گئ ہے اور وہ محفوظ جگہ آگ کی طرح جلتی کیوں ہے؟.. میرے ہاتھ میں کتاب ہے… شاید وہ بائبل ہے… اس میں لکھا ہے سب انسان برابر ہیں..
میرا نام ؟ میرا نام تو ابھی کسی نے رکھا نہیں کیوں کے میں ابھی پیدا نہیں ہوا .. اگر میری پناہ گاہ میں اتنے سوراخ نہ ہو جاتے تو شاید میں آسانی سے سانس لیتا اور ٤ دن بعد میں اس دنیا میں آنکھ کھولتا. سوچتا ہوں کے ایسا تو میرے بنانے والے نے میرے لئے نہیں چاہا ہو گا؟ بغیر پیدا ہوے میں آگ میں جلتا ہوں… میرے ماں مجھے بچانے کی کوسش کرتی ہے لکن وہ تو خود … خود آھستہ آھست ختم ہوتےکو ہے.. اور اس کے ساتھ میں بھی آنکھیں موندتا ہوں… باہر سے آہو بکا سنائی دیتی ہے… میں خوش ہوں کے میں اسکو نہیں دیکھتا…

میرا نام آدرش لال ہے… آج ہولی نہیں ہے لکن ہر طرف لال رنگ پھیلتا ہے … اس میں میرا بھی لال رنگ ہے… وہ جو میرے جسم میں پیوست چا کو سے نکلتا ہے … مجھے لال رنگ سے اپنی بیٹی پریہ یاد آتی ہے… وہ جس کی شادی پچھلے مہینے اغوا کے بعد زبردستی انھوں نے کردی.. وہ کہتے تھے ایسے ہی تم لوگوں کی فلاح ہے… اس کا لال رنگ کا لہنگا… اورچا کو سے لگا میرا لال ہولی کا رنگ. دونو ایک جیسے لگتے ہیں

میرا نام ضیاء خان ہے.. میں ایک مسلمان ہوں… فرقہ یاد نہیں.. ابّو نے کہا تھا کے ہم بس مسلمان ہیں کسی فرقے سے نہیں..انھوں نے مسجد میں مارنے سے پہلے پوچھا نہیں کے کون کون یہاں مسلمان ہے؟ کس فرقے سے ہے؟
وہ جُممے کی نماز کے وقت اندر آیا اسکی آنکھیں خالی تھی .. بلکل خالی جیسے اس کی روح نہ ہو بس ایسے جیسے چلتی پھرتی لاش ہو .. وہ بس ایک مشین جیسا تھا… میں نے اس کا ہاتھ دیکھا وہ ایک دھاگے کو کھینچتا تھا… اور پھر سب کچھ رک گیا.. بہت ایھستا آھستہ… اس کا جسم سینکڑوں ٹکڑوں میں بٹ گیا.. ہر طرف لال رنگ کے چھینٹے اڑتے تھے لکن اس کو آنکھیں .. ان میں کوئی رنگ نہ اترا…. وہ تو خالی ہی رہیں … ایسے جیسے اس کو کچھ معلوم ہی نہ ہو… ١٧ یا ١٨ برس کے بچے کو ویسے بھی کیا معلوم ہوتا ہے…

اور اب میں…. میں تو .. میرا نام.. میرا نام شاید شرمندگی ہے… میرے گردن شرم سے جھکی ہے … میرے آنکھیں زمین میں گڑی ہیں. … نہیں میں وہ نہیں جس نے ان سب کو مارا…. میں تو وہ ہوں… جو اپنے گھر میں بیٹھ کر ان سب کی کہانی سنتا ہے. ..سناتا ہے .. دکھی ہوتا ہے …کچھ دن رات ٹھیک سے نیند نہیں آتی….. اور بس…. پھر میں آگے چلتا ہوں… کیوں کے مرنے والوں کے ساتھ مرا نہیں جاتا؟….. نہیں….. کیوں کے میں جانتا ہوں کے کل میرے باری ہے… کیوں کے آج میں خاموش ہوں… میرا نام … میرا نام قاتل ہے اور میں آئینے میں رہتا ہوں

Copy Right @ Zunaira Saqib 2013